رسولوں 18

1

اسکے بعد پولس ایتھنز کو چھوڑ کر کورنتھ شہر آیا۔

2

کورنتھ میں پولس عقیلہ نامی یہودی سے ملا ۔ عقیلہ پنطس نامی جگہ میں پیدا ہوا تھا عقیلہ اور اسکی بیوی پر سکلہ اطالیہ (اٹلی) سے حال ہی میں آئے تھے اور کرنتھس میں بس گئے تھے ۔ انہوں نے اطالیہ اس لئے چھو ڑا تھا کیوں کہ کلا دیس نے تمام یہودیوں کو حکم دیا تھا کہ وہ روم کو چھوڑ دیں ۔پولس اکولہ اور پر سکلہ سے ملنے گیا ۔

3

وہ خیمہ بنا نے والے تھے اور پو لس کا بھی وہی پیشہ تھا ۔ پو لس ان کے ساتھ رہ کر کام بھی کیا ۔

4

ہر سبت کے دن پو لس یہودی ہیکل میں یہودیوں اور یونانیوں سے بات کیا کرتا اور انہیں یسوع کو ماننے کی رغبت دلا تا ۔

5

سیلاس اور تموتھی نے مقدونیہ سے کورنتھ پولس کے پاس آئے ۔ تب پولس نے اپنا سارا وقت لوگوں کو خوشخبری سنانے میں وقف کیا اس نے یہودیوں کو بتا یا کہ یسوع ہی مسیح ہے ۔

6

لیکن یہودیوں نے پولس کی تعلیمات کو قبول نہیں کیا اور اسے برا کہا ۔ اس لئے پولس نے اپنے کپڑوں کی گرد جھا ڑ کریہودیوں سے کہا ،” اگر تمہیں نجات نہ ملے تو یہ تمہاری اپنی غلطی ہو گی ۔ میں وہ سب کچھ کر چکا ہوں جو میں کر سکتا ہوں ۔ اب یہیں سے میں غیر یہودیوں کے پاس جاؤں گا ۔ “

7

پولس اٹھا اور یہودی ہیکل سے کسی ططِس یُوستس کے مکان گیا یہ آدمی سچّے خدا کا عبادت گزار تھا اس کا مکان یہودی عبادت خانے سے ملا ہوا تھا ۔

8

کرسپس یہودی ہیکل کا سردار تھا ۔ کرسپس اور اس کے گھر میں رہنے والے تمام لوگوں نے خدا وند پر ایمان لا ئے ۔نیز کورنتھ کے رہنے والے دوسرے کئی لوگوں نے پولس کی باتوں کو سنا ایمان لائے اور بپتسمہ لیا ۔

9

رات میں پولس نے رویا میں دیکھا کہ خدا وند نے اس سے کہا ،” مت ڈرو تبلیغ کو جاری رکھو اور رکو مت ۔

10

میں تمہارے ساتھ ہوں کو ئی بھی تمہارے اوپر حملہ کر کے نقصان نہ پہنچا سکیگا کیوں کہ میرے بہت سے لوگ اس شہر میں ہیں ۔”

11

پولس وہاں ڈیڑھ سال رہا اور لوگوں کو خدا کی تعلیمات سکھا تارہا۔

12

گلّیو ملک اخیہ کا صوبہ دار بنا تھا تب کچھ یہودی پولس کے مخالف بن کر آئے اور اسے عدالت میں لا ئے ۔

13

یہودیوں نے گلّیو سے کہا،” یہ شخص لوگوں کو خدا کی عبادت کر نے کے لئے وہ تعلیمات کو سکھا رہا ہے جو ہمارے یہودی قانون کے خلاف ہے ۔”

14

پولس کہنے کے لئے تیار ہوا لیکن گلّیو نے یہودیوں سے کہا ،” اے یہودیو! میں یقیناً تم لوگوں کی ضرور سنتا اگر تم لوگ کسی برے کام یا خطر ناک جرم کے بارے میں شکایت کر تے ۔”

15

لیکن تم لوگ جو بحث کر رہے ہو الفاظ ناموں اور تمہارے یہودی قانون کے متعلق ہے ۔ اس لئے اس مسئلہ کو جو تمہارا ہے تمہیں اپنے طور پر حل کرنا ہوگا میں اس قسم کے موضوعات کا منصف بننا نہیں چاہتا ۔”

16

اور گلّیوں نے انہیں عدالت سے جانے کے لئے کہا ۔

17

تب ان سب لوگوں نے ہیکل کے سردار سوستھینس کو پکڑا اور اسکو عدالت کے سامنے مارا لیکن گلّیونے ان تمام باتوں کی پر واہ نہ کی ۔

18

پولس بھا ئیوں کے ساتھ کئی دن گزارے تب نکل کر جہاز کے ذریعہ ملک شام گیا ۔ پر سکّلہ اور اکولہ بھی اسکے ساتھ تھے ۔ ایک جگہ جو کنحرییہ کہلا تی ہے ۔ پولس نے اپنے بال کٹوائے اس کا مطلب یہ تھا کہ اس نے خدا سے عہد کیا تھا ۔

19

تب وہ افُس شہر گیا جہاں پولس نے پر سکلّہ اور اکولہ کو چھوڑا تھا ۔ جب پو لس افُس میں تھا تو وہ یہودیوں کے ہیکل میں گیا اور یہودیوں سے بات کی ۔

20

یہودیوں نے پو لس سے مزید اور کچھ دن ٹھہر ے رہنے کو کہا لیکن اس نے انکی نہیں مانی ۔

21

پولس نے ان سے کہا، “ اگر خدا نے چاہا تو میں دوبارہ تمہارے پاس آؤنگا ۔ “ تب افُس سے نکلا اور جہاز سے روانہ ہوا ۔

22

پولس قیصریہ شہر کو گیا اور یروشلم میں وہ کلیسا کے ایمان والے گروہ کو سلام کر کے انطاکیہ آیا ۔

23

پولس کچھ عرصہ انطاکیہ سے گلتیہ اور فروُگیہ کے ذریعہ دوسرے کئی شہروں اور قصبات کو گیا اور وہاں شاگردوں کو مضبوط کر تا گیا ۔

24

اپلّوس جو یہودی تھا افیُس کو آیا اپلّوس سکندریہ میں پیدا ہوا تھا وہ ایک تعلیم یا فتہ آدمی تھا ۔ اس کو صحیفوں کے متعلق بہت اچھی معلو مات تھی ۔

25

اپلّوس خداوند کے طریقہ کے متعلق پڑھا تھا اور جب کبھی یسوع کے متعلق لوگوں سے کہتا تھا تو جوش میں آجاتا وہ یسوع کے متعلق صحیح صحیح تعلیم دیتا جو اس نے یسوع سے حاصل کی تھی ۔ لیکن وہ یوحنا کے بپتسمہ کے متعلق سے بھی واقف تھا ۔

26

اپلّس نے یہودی ہیکل میں بلا خوف کہنا شروع کیا پرسکّلہ اور اکولہ نے اسکو تعلیم دیتے سنا ہے وہ اسکو اپنے گھر لے گئے اور اسکو خدا کی راہ کو اور زیادہ صحیح طریقہ سے بتایا ۔

27

ا پلّوس شہر اخیہ کے صوبہ جانا چاہتا تھا اسلئے افیُس کے بھا ئیوں نے اس کی مدد کی انہوں نے اخیہ میں یسوع کے شاگردوں کو ایک خط لکھا کہ وہ اپلّوس کا استقبال کریں ۔ اخیہ کے شاگرد خدا کے فضل سے ایمان لائے تھے جب اپلّوس وہاں پہونچا تو انہوں نے اس کی بڑی مدد کی ۔

28

سب لوگوں کے سامنے اس نے یہودیوں سے زور دار بحث کی اور یہودیوں کے مقابلے میں جیت گیا ۔ اس نے صحیفوں کی شہادت سے ثابت کیا کہ یسوع ہی مسیح ہے ۔