متّی 21

1

یسوع اور اسکے شاگرد یروشلم کی طرف سے سفر کرتے ہو ئے زیتون کے پہاڑ کے نزدیک بیت فگے کو پہنچے ۔

2

وہاں یسوع نے اپنے دونوں شا گردوں کو بلا کر کہا، “ تم اپنے سامنے نظر آنے والے شہر کو جاؤ ۔ جب تم اس میں داخل ہو گے تو وہاں پر بندھی ہو ئی ایک گدھی پاؤگے ۔ اور اس گدھی کے ساتھ اسکا بچہ بھی ہو گا ۔ انہیں کھو ل کر میرے پاس لے آؤ ۔

3

اگر تم سے کو ئی یہ پو چھے کہ ان گدھوں کو کھو ل کر کیوں لے جا رہے ہو تو کہنا کہ مالک کو ان گدھوں کی ضرورت ہے اور وہ ان گدھوں کو بہت جلد ہی واپس لوٹا دیگا ۔ یہ کہہ کر انہوں نے ا ن لوگوں کو بھیج دیا ۔”

4

یہ اسلئے ہوا کہ جو پیشین گوئی نبی کے ذریعے دی گئی تھی پوری ہو جائے :

5

“ صیّون شہر سے کہہ دو ۔ تیرا بادشاہ اب تیرے پاس آرہا ہے وہ بہت ہی عاجزی سے گدھے پر سوار ہو کر آرہا ہے ۔ ہاں وہ جوان گدھے پر بیٹھ کر آرہا ہے ۔ جو پیدائش سے ہی کام کر نے والا جانور ہے۔” زکریاہ ۹:۹

6

یسوع کے کہنے کے مطابق وہ شاگرد گئے گدھی اور اسکے بچے کو یسوع کے پاس لا ئے ۔

7

وہ اپنے جبّوں کو انکے اوپر ڈالدیا ۔

8

تب یسوع اس پر سوار ہو کر یروشلم چلے گئے ۔ بہت سارے لوگ اپنے جبّوں کو یسوع کی خاطر راستے پر بچھا نے لگے ۔ اور بعص لوگ درختوں سے شگوفے اور نئی کونپلیں توڑ لائے اور راہ پر پھیلا دیئے ۔

9

بعض لوگ یسوع کے آگے اور بعض لوگ یسوع کے پیچھے چلتے آرہے تھے ۔ اور ان لوگوں نے اس طرح نعرے لگانے لگے : “ ابن داؤد کی تعریف و بڑائی کرو , خداوند کے نام پر آنے والے کو خدا کی نظر و کرم ہو ۔ زبور ۱۱۸:۶ آسمانی خدا کی حمد و ثنا کرو!”۔

10

جب یسوع یروشلم میں داخل ہو ئے تو سارے شہر کے لوگ پریشان ہو گئے ا ن میں ہلچل مچ گئی اور دریافت کر نے لگے کہ” یہ کون آدمی ہے “؟

11

یسوع کے پیچھے پیچھے چلنے والے ہجوم نے جواب دیا، “ یہی یسوع ہے، یہ گلیل علاقے کے ناصرت نام کے گاؤں کا نبی ہے ۔ “ (مرقس۱۱:۱۵-۱۹؛لوقا ۴۸-۴۵:۱۹؛ یوحنا ۲۲-۱۳:۲)

12

یسوع ہیکل کے اندر چلے گئے ۔ وہاں پر خرید و فروخت کر نے والے تمام لوگوں کو اس نے وہاں سے بھگا دیا ۔ سکوں کا صرّافہ کر نے والوں کو اور کبوتر فروخت کر نے والوں کے میز گرا دیئے ۔

13

یسوع نے وہاں پر موجود لوگوں سے کہا، “میرا گھر عبادت گاہ کہلائے گا۔” اسی طرح صحیفوں میں لکھا ہوا ہے، “ لیکن تم ہیکل کو چوروں کے غار کی طرح بنا دیتے ہو۔”

14

چند اندھے اور لنگڑے لوگ ہیکل میں یسوع کے پاس آئے ۔ یسوع نے انکو شفاء دی ۔

15

اعلی کاہنوں اور معلّمین شریعت نے یہ سب دیکھا ۔ ان لوگوں نے یسوع کے معجزے اور ہیکل میں چھوٹے چھو ٹے بچّوں کو یسوع کی تعریف میں گن گاتے ہو ئے دیکھا ۔ چھوٹے بچے پکار رہے تھے” داؤد کے بیٹے کی تعریف ہو” ان سب کی وجہ سے کاہن اور معلّمین شریعت غصّہ سے بھڑک اٹھے ۔

16

اعلی کاہنوں اور معلّمین شریعت نے یسوع سے پو چھا، “ یہ چھو ٹے بچے جو باتیں کہہ رہے ہیں کیا انکو تو نے سنا ؟ “یسوع نے جواب دیا،” ہاں تو نے چھو ٹے اور معصوم بچوں کو تعریف کرنا سکھا یا ہے۔ جو بات صحیفوں میں مذکور ہے ۔ اور پوچھا کہ کیا تم صحیفہ پڑھتے نہیں ہو ؟”

17

تب اس نے اس جگہ کو چھو ڑ دیا اور بیت عنیاہ کو چلے گئے اور یسوع نے اس رات وہیں پر قیام کیا ۔ (مرقس۱۱:۱۲-۱۴؛ ۲۰-۲۴)

18

دوسرے دن صبح یسوع شہر کو واپس جا رہے تھے کہ انکو بھوک لگی ۔

19

انہوں نے راستے کے کنارے ایک انجیر کا درخت دیکھا اور اسکے میوہ کو کھانے کے لئے درخت کے قریب گئے ۔ لیکن درخت میں صرف پتّے ہی تھے ۔ اس وجہ سے یسوع نے اس درخت سے کہا، “ اس کے بعد تجھ میں کبھی پھل پیدا نہ ہوں ۔” اسکے فوراً بعد انجیر کا درخت خشک ہو گیا ۔”

20

شاگردوں نے اس منظر کو دیکھ کر بہت تعجب کیا اور پو چھنے لگے یہ انجیر کا درخت اتنی جلدی کیسے سوکھ گیا ؟ “

21

یسوع نے جوابدیا، “ میں تم سے سچ کہتا ہوں کہ اگر تم شک و شبہ کے بغیر ایمان لاؤ جس طرح میں نے اس درخت کے ساتھ کیا ہے ویسا ہی تمہارے لئے بھی کرنا ممکن ہو سکے گا اس سے اور زیادہ بھی کر ناممکن ہو گا ۔ اگر تم اس پہاڑ سے کہو کہ تو جاکر سمندر میں گر جا اگر پختہ ایمان سے کہا جائے تو ایسا بھی ضرور ہو گا ۔

22

جو کچھ بھی تم دعا میں مانگو گے وہ تمہیں ملیگا اگر تمہارا ایمان پختہ ہے ۔ “ (مرقس ۱۱:۲۷-۳۳ ؛ لوقا ۲۰:۱-۸ )

23

یسوع ہیکل میں چلے گئے ۔ یسوع جب وہاں تعلیم دے رہے تھے تو سردار کاہنوں اور لوگوں کے بڑے بڑے رہنما یسوع کے پاس آئے اور وہ یسوع سے پو چھنے لگے” تو ان تمام باتوں کو کس کے اختیارات سے کر رہا ہے ؟ اور یہ اختیار تجھے کس نے دیا ہے ؟ ہمیں بتا”

24

یسوع نے کہا، “ میں تم سے ایک سوال پوچھتا ہوں ۔اگر تم نے اسکا جواب دیا تو میں تم کو بتا دونگا کہ میں کس کے اختیارات سے انکو کر رہا ہوں ۔

25

اگر ہم کہتے ہیں کہ کیا یوحنا کو بپتسمہ دینے کا اختیار خدا سے یا کسی انسان سے ملا ہے ؟ مجھے بتاؤ ۔ کاہن اور یہودی قائدین یسوع کے سوال سے متعلق آپس میں باتیں کر نے لگے کہ اگر یہ کہیں کہ یوحنا کو بپتسمہ دینے کا اختیار خدا سے ملا ہے تو وہ پو چھے گا کہ ایسے میں تم اس پر ایمان کیوں نہیں لائے ؟

26

“ اگر یہ کہیں کہ وہ انسان سے ملا ہے تو لوگ ہم پر غصّہ کریں گے ۔ اسلئے کہ ان سبھوں نے یوحنا کو ایک نبی تسلیم کیا ہے ۔ جس کی وجہ سے ہم ان سے ڈریں ۔ اسطرح وہ آپس میں باتیں کر نے لگے ۔”

27

تب انہوں نے جواب دیا، “ یو حنا کو کس نے اختیار دیئے ہمیں نہیں معلوم” پھر یسوع نے کہا ، “میں ان تمام باتوں کو کس کے اختیارات سے کرتا ہوں وہ تمہیں نہیں بتاؤنگا !

28

“ اس کے بارے میں تم کیا سمجھتے ہو ۔ایک آدمی کے دو بیٹے تھے ۔ وہ آدمی پہلے بیٹے کے پاس گیا اور کہا کہ بیٹا آج تو انگور کے باغ میں جا کر کام کر ۔

29

اس پر بیٹے نے جواب دیا، میں نہیں جا ؤں گا ۔لیکن پھر بعد میں ارادہ بدل کر کام پر چلا گیا ۔

30

“ باپ نے پھر دوسرے بیٹے کے پاس جاکر کہا کہ بیٹا آج تو انگور کے باغ میں جاکر کام کر ۔ تب بیٹے نے کہا، اے میرے ابّا ٹھیک ہے میں جاکر کام کرتا ہوں ۔ لیکن وہ بیٹا کام پر گیا ہی نہیں ۔

31

“ ان دونوں میں سے کون باپ کا فرماں بردار ہوا” ؟ تب یہودی قائدین نے جواب دیا،” پہلا بیٹا” تب یسوع نے ان سے کہا، “ میں تم سے سچ کہتا ہوں کہ محصول وصول کر نے والوں اور طوائفوں کو تم برے لوگ تصور کرتے ہو ۔ لیکن وہ تم سے پہلے خدا کی بادشاہت میں داخل ہونگے ۔

32

تم کو زندگی کے صحیح طریقے اور ڈھنگ سکھا نے کے لئے یو حنا آئے تھے ۔ لیکن تم تو یوحنا پر ایمان نہ لائے ۔ جیسا کہ تم محصول وصول کرنے والوں اور فا حشاؤں کو ایمان لاتے ہو ئے تم دیکھ چکے ہو- لیکن اسکے با وجود بھی تم اپنے اندر تبدیلی لانا اور ایمان لانا نہیں چاہتے ۔ اور ان پر ایمان لانے سے انکار کر تے ہو- (مرقس۱۲:۱-۱۲؛ لوقا۲۰:۹-۱۹)

33

“ ا س کہا نی کو سنو ! ایک آدمی کا اپنا ذاتی باغ تھا ۔اور وہ اپنے باغ میں انگور کی فصل لگا ئی۔ باغ کے اطراف دیوار تعمیر کی انگور کی مئے تیار کروا نے کے لئے گڑھے کھد وا یا اور نگرا نی کے لئے مچان بنو ایا ۔وہ اس باغ کو چند کسانوں کو ٹھیکہ پر دیا اور دوسرے ملک کو چلا گیا ۔

34

جب انگور کی فصل توڑ نے کا وقت آیا تو اس نے نوکروں کو اپنا حصہ لا نے کیلئے کسا نوں کے پاس بھیجا ۔

35

تب ایسا ہوا کہ ان باغبانوں نے ان نوکروں کو پکڑ لیا اور ایک کی تو پٹائی کی اور دوسرے کو مار دیا اور تیسرے نوکر کو پتھر پھینک کر مار دیا *۔

36

اس لئے اس نے پہلے جتنے نوکروں کو بھیجا تھا ان سے بڑھ کر نوکروں کو ان باغبانوں کے پاس بھیجا ۔ لیکن باغبانوں نے جس طرح پہلی مرتبہ کیا تھا اسی طرح دوسری مرتبہ ان نوکروں کو بھی ایسا ہی کیا ۔

37

تب اس نے سمجھا کہ یقیناً باغبان میرے بیٹے کی عزت کریں گے اسلئے اس نے اپنے بیٹے ہی کو بھیجا ۔

38

لیکن جب باغبانوں نے بیٹے کو دیکھا تو آپس میں باتیں کرنے لگے یہ تو باغ کے مالک کا بیٹا ہے ۔ یہ باغ تو اسی کا ہوگا ۔ اسلئے اگر ہم اسکو مار دیں تو یہ باغ ہمارا ہی ہوگا ۔

39

اسطرح باغبانوں نے بیٹے کو پکڑ کر باغ سے باہر کھینچ کر لایا اور اسکو قتل کر دیا ۔

40

“ ان حالات میں جب باغ کا مالک خود آئیگا تو وہ ان کسانوں کا کیا کریگا ؟”

41

یہودی کاہنوں اور قائدین نے کہا، “ یقیناً وہ ان ظالموں کو ماریگا اور اپنا باغ دوسرے کسانوں کو ٹھیکہ پر دیگا ۔ تا کہ موسم پر اسکا حصّہ دیں سکیں۔”

42

یسوع نے ان سے کہا یقیناً تم نے اس بات کو صحیفو ں میں پڑھا ہے :گھر کی تعمیر کرنے والے نے جن پتّھر کو ردّ کیا وہی پتھّر میرے کو نے کا پتھّر بن گیا ۔ یہ کام خدا وند نے کیا ۔ اور یہ ہمارے لئے حیرت کا باعث ہے ۔ زبور ۱۱۸:۲۲-۲۳

43

“ اسی وجہ سے میں تم سے جو کہتا ہوں وہ یہ کہ خدا کی بادشاہت تم سے چھین لی جائیگی اس خدا کی بادشاہت کو خدا کی مرضی کے مطابق کام کر نے والوں کو دی جائیگی ۔

44

جو شخص اس پتھّر پر گریگا ٹکڑے ٹکڑے ہو جائیگا ۔ اور اگر پتھّر اس شخص پر گریگا تو یہ اس شخص کو کچل ڈالیگا ۔

45

سردار کاہنوں اور فریسیوں نے یسوع کی کہی ہوئی کہانیوں کو سنا تو ان لوگوں نے جانا کہ یسوع ان لوگوں کے بارے میں بات کر رہا تھا ۔

46

انہوں نے یسوع کو قید کرنے کی تدبیر تلاش کی لیکن وہ لوگوں سے گھبراکر گرفتار نہ کر سکے ۔ کیوں کہ لوگ یسوع پر ایک نبی ہو نے کے ناطے ایمان لا چکے تھے ۔